براہ کرم پہلے مطلوبہ لفظ درج کریں
سرچ
کی طرف سے تلاش کریں :
علماء کا نام
حوزات علمیہ
خبریں
ویڈیو
18 ذوالحجة 1445
ulamaehin.in website logo
مولانا علی ارشاد مبارکپوری ره

مولانا علی ارشاد مبارکپوری

Maulana Ali Irshad Mubarakpuri

ولادت
۱۱ ذی القعده 1345 ه.ق
مبارکپور
وفات
13 محرم الحرام 1408 ه.ق
مبارکپور
والد کا نام : مولانا علی حماد
تدفین کی جگہ : مبارکپور
مجتهد، شاعر، مؤلف، حکیم
شیئر کریں
ترمیم
کامنٹ
سوانح حیات
تصاویر
متعلقہ لنکس

سوانح حیات

مبارکپور، اعظم گڈھ کا مشہور ومعروف علمی خوانوادہ "خوانوادۂ جلیلۂ واحدی" کسی تعارف کا محتاج نہیں ہے۔ اس خوانوادہ نے تقریباً ٢٢٥ سال سے جو علمی، دینی، مذہبی اور قومی و ملی خدمات انجام دی ہیں وہ کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہیں۔

قابل ذکر بات یہ ہیکہ اس خوانوادہ کے علماء "علم الادیان اور علم الابدان" دونوں میں اعلٰی صلاحیتوں کے مالک تھے۔

وہ اک طرف علم الادیان کے ذریعے قوم وملت کے تزکیۂ نفس کے ساتھ انکی علمی پیاس بجھاتے تھے تو دوسری طرف علم الابدان کے ذریعے بیمار جسموں کا علاج کرتے تھے۔

عالیجناب مولانا میانصاحب جان محمد صاحب قبلہ اعلی اللہ مقامہ سے جو علمی سلسلہ چلا تو الحمدللہ آجتک بلا فاصلہ جاری ہے۔

اسی علمی سلسلہ کی اہم کڑی حضرت حجۃ الاسلام والمسلمین الحاج علامہ علی ارشاد صاحب قبلہ نجفی  مجتہد العصر اعلی اللہ مقامہ (سابق امام جمعہ و متولی شیعہ جامع مسجد مبارکپور) ہیں

مبارکپور اعظمگڈھ کا یہ درخشندہ ستارہ ۱۱ ذیقعدہ ۱۳۴۵ھجری مطابق ٢١/مارچ ۱۹۲۶عیسوی کو افق مبارکپور پہ طلوع ہوا

آپ کے والد ماجد عالیجناب مولانا حکیم علی حماد صاحب قبلہ اعلی اللہ مقامہ مبارکپور کے جید علماء اور مشہور اطباء میں تھے اور والدہ ماجدہ صغری مرحومہ، جناب امان اللہ مرحوم ساکن املو کی بیٹی تھیں۔

 

آپ کی شادی میں آپ کے والد ماجد کا عظیم کارنامہ

آپ کے عظیم المرتبت والد کے عظیم کارناموں میں ایک عظیم اور منفرد کارنامہ یہ ہے کہ مبارکپور اعظمگڈھ کی شادیوں میں جو گانے باجے کا رواج تھا اسے سرے سے ختم کرکے سہرہ خوانی شروع کرائی اور سب سے پہلے اپنے فرزند اکبر علامہ علی ارشاد النجفی اعلی اللہ مقامہ کی شادی میں سہرہ پڑھواکر اسکی بنیادی رکھدی اس کے بعد سہرہ خوانی کا یہ رواج شیعوں سے ہوتے ہوئے دوسرے مسلمانوں کے درمیان رائج ہوگیا اور اب مسلمانوں کے تقریباً ہر فرقے کی شادی میں سہرہ خوانی ہوتی ہے۔

تعلیم

آپ نے ابتدائی تعلیم گھر پر اپنے عظیم المرتبت والد سے پھر مدرسہ احیاء العلوم مبارکپورمیں پھر ایک سال مدرسہ باب العلم  میں حاصل کی اس کے بعد  مدرسہ ناصریہ جونپور تشریف لے گئے جہاں ۱۹۴۲ء میں "مولوی" اور ۱۹۴۳ء میں "عالم" کی سند لے کر جامعہ جوادیہ بنارس چلے گئے وہاں سے ۱۹۴۸ء میں "فخرالافاضل" کرکے ۱۹۴۹ء میں "فاضل طب الہ آباد بورڈ" کا امتحان پاس کیا  اور جامعہ جوادیہ میں تعلیم کے دوران ہی لکھنو یونیورسٹی سے ۱۹۴۶ء میں "دبیر کا مل کا امتحان دے کر سند حاصل کی ۔

ہندوستان کی تعلیم سے فراغت کے بعد ۱۹ شعبان ۱۳۶۸ ھ مطابق جون ۱۹۴۹ء بغرض تعلیم اجتہاد آپ نجف اشرف عراق تشریف لے گئے اور وہاں سے اجازات  حاصل کرکے ۲۳رمضان المبارک ۱۳۷۳ھ مطابق ۱۹۵۴ء وطن عزیز واپس لوٹے۔

اساتذہ

آپ کے عظیم المرتبت اساتذہ میں سر فہرست ہندوستان میں :

آیۃ اللہ فی العالمین الحاج مولانا سید ظفر الحسن الرضوی صاحب قبلہ اعلی اللہ مقامہ (سابق پرنسپل جامعۂ جوادیہ بنارس)

فخر الاتقیا الحاج مولانا وصی محمد صاحب قبلہ اعلی اللہ مقامہ (سابق پرنسپل وثیقہ عربی کالج فیض آباد)

اور عراق میں

مرجع جہان تشیع حضرت آیۃ اللہ العظمٰی السید محسن  الحکیم اعلی اللہ مقامہ

مرجع جہان تشیع حضرت آیۃ اللہ العظمیٰ السید ابو القاسم الموسوی الخوئ اعلی اللہ مقامہ

وغیرھم کا شمار ہوتا ہے

 

اجازات

آپ کو جن مراجع عظام نے اجازات عطا فرمائیے  ان کے اسمائے گرامی یہ ہیں:

١- مرجع جہان تشیع حضرت آیۃ اللہ العظمیٰ آقائے السید محسن الحکیم طباطبائی طاب ثراہ

٢- مرجع جہان تشیع حضرت آیۃ اللہ العظمیٰ آقائے السید ابوالقاسم الخوئ طاب ثراہ

٣- مرجع جہان تشیع حضرت آیۃ اللہ العظمیٰ آقائے السید عبداللہ الموسوی الشیرازی طاب ثراہ

٤- حضرت آیۃ اللہ العظمیٰ آقائے حسینی الموسوی الحمامی طاب ثراہ

٥- حضرت آیۃ اللہ العظمیٰ آقائے محمد جواد طباطبائی التبریزی طاب ثراہ

٦- حضرت آیۃ اللہ العظمیٰ آقائے بزرگ تہرانی طاب ثراہ

٧- حضرت آیۃ اللہ العظمیٰ آقائے محمد باقر الزنجانی طاب ثراہ

 

مبارکپور کے پہلے اور آخری نجفی اور مجتہد

مبارکپور کے یوبندی مسلک کے عظیم محقق جناب مولانا قاضی اطہر صاحب مبارکپوری اپنی کتاب "تذکرۂ علماء مبارکپور" کے صفحہ ٥١ پر تحریر فرماتے ہیں کہ "۔۔۔۔بعد میں یہاں کے شیعی علماء نے ناظمیہ کالج لکھنؤ، مدرسۃ الواعظین لکھنؤ، جوادیہ کالج بنارس، جامعۂ سلطانیہ لکھنؤ وغیرہ کے اساتذہ سے  پڑھا اور"بعضوں" نے نجف اشرف عراق کے شیوخ سے تحصیل و تکمیل کی" (کتاب مطبوعہ جمادی الاول ١٣٩٤ھ مطابق جون ١٩٧٤ء)

لیکن شاید قاضی صاحب کو غلط معلومات دی گئی کیونکہ ١٩٨٧ء مطابق ١٤٠٨ھ والد مرحوم مولانا علی ارشاد صاحب قبلہ نجفی اعلی اللہ مقامہ کی وفات تک آپ کے علاوہ مبارکپور کے کسی بھی عالم نے نجف اشرف عراق میں تعلیم حاصل نہیں کی، مولانا مرحوم مبارکپور کے پہلے اور آخری نجفی مجتہد تھے۔ (احسان عباس قمی مبارکپوری)

 

تبلیغات و خدمات

۱۹۵۴ء سے ۱۹۸۷ء تک آپ نے ہندوستان کے مختلف مقامات اور متعدد مدارس و جامعات میں تبلیغ و تدریس کے فرائض انجام دیئے۔  

 نجف اشرف سے واپس آکر سب سے پہلے آپ نے دینی خدمات کا آغاز  قصبہ اور قرب وجوار میں تبلیغات کے ذریعے کیا۔

اس کے بعد ٨ جنوری ١٩٥٦ء مطابق ٢٤ جمادی الاول ١٣٧٥ھ کو وثیقہ عربی کالج فیض آباد میں بحیثیت مدرس عارضی تقرر ہوا پھر ٩ جولائی ١٩٥٦ء کو کمیٹی کے ذریعے آپ کا مستقل تقرر بحیثیت وائس پرنسپل ہوگیا، اگست ١٩٥٨ء میں آپنے وثیقہ عربی کالج سے استعفیٰ دے دیا۔

١٣ اگست ١٩٥٨ء مطابق ٢٦ محرم ١٣٧٨ھ کو مدرسہ باب العلم مبارکپور میں بحیثیت مدرس اعلیٰ (پرنسپل) آپ کا تقرر ہوا، آپ نے مسلسل سات سال مدرسہ باب العلم مبارکپور میں مدرس اعلیٰ (پرنسپل) کے فرائض انجام دئے، آپ نے اپنی پرنسپلی کے دوران تعلیمی معیار کو کافی بلند کیا اور کارہائے نمایاں انجام دیئے بالآخر بعض ناگوار حالات کی بنا پر ٢ اکتوبر ١٩٦٥ء کو مدرس اعلیٰ کے عہدے سے استعفٰی دے کر ممبئی چلے گئے وہاں سے شاہ خراسان علیہ السلام نے زیارت کے لئے بلالیا اور آپ امام رضا علیہ السّلام کی زیارت سے مشرف ہوئے ۔

فروری ١٩٦٦ء میں گھر واپس آئے  اور ١٣ اپریل ١٩٦٦ء مطابق ٢٢ ذی الحجہ ١٣٨٦ھ سے رستم پورہ گجرات میں بحیثیت امام جمعہ فرائض انجام دینا شروع کیا، سات سال تک وہاں دینی خدمات انجام دیئے ۔

 

رستم پورہ میں آپ کا عظیم کارنامہ

 اسی دوران علیگڑھ مسلم یونیورسٹی کا کیمپ لگواکر وہاں کے طلبہ و طالبات کو ادیب، ادیب ماہر، ادیب کامل وغیرہ کا امتحان دلوایا اور ماشاءاللہ سبھی کامیاب ہوئے۔ وہاں کے مومنین اک عرصے تک تقیہ میں رہ کر مذہب تشیع سے نا آشنا ہوگئے تھے آپ نے انپہ بہت کام کیا اور انہیں مذہب تشیع سے مکمل طور پر آشنا کرایا، وہاں اسوقت جعفری سادات کی کافی تعداد موجود ہے اور وہاں کے مومنین آج تک آپ کو یاد کرتے ہیں اور آپ ہی کی وجہ سے آپ کی فیملی سے بے انتہا پیار کرتے ہیں۔ اک عرصے تک وہاں جو بھی شادی ہوتی تھی آپ کو نکاح کے لئے بلایا جاتا تھا۔

آپ رستم پورہ کے اہلسنت بھائیوں کے ساتھ ہی ساتھ ہندو بھائیوں سے بھی بڑی انکساری سے پیش آتے تھے وہ لوگ بھی آپ کی بڑی عزت کرتے تھے۔

سات سال وہاں خدمات انجام دینےکے بعد آپ ٢٠ اپریل ١٩٧٣ء کو وہاں سے وطن واپس آگئے، ڈیڑھ مہینہ گھر پر رہنے کے بعد جولائی ١٩٧٣ء کے آخری ہفتے میں مالیگاؤں مہاراشٹر کے لئے روانہ ہوئے ٣١ جولائی ١٩٧٣ء کو مالیگاؤں مہاراشٹر پہونچے اور یکم اگست ١٩٧٣ء مطابق یکم رجب ١٣٩٣ھ سے حسینی مسجد میں بحیثیت امام جمعہ خدمات انجام دینے لگے، ١١ جون ١٩٧٥ء کو وہاں سے وطن واپس آئے اور مستقل طور پر وطن ہی میں رہنے کا ارادہ کرلیا۔

 

مبارکپور میں جمعہ وجماعت 

مبارکپور میں جمعہ وجماعت کی امامت اور شیعہ جامع مسجد کی تولیت کی ذمہ داری

بیرون وطن خدمات انجام دینے کے دوران آپ جب بھی مبارکپور تشریف لاتے شیعہ جامع مسجد مبارکپور میں امام جمعہ وجماعت کے فرائض انجام دیتے رہتے (کیونکہ آپ کے آباء واجداد بھی ٦/ پشتوں سے اس مسجد کے امام جمعہ وجماعت رہے ہیں) اور جب ١٩٧٥ء میں مستقل طور سے آپنے وطن ہی میں رہنے کا ارادہ کرلیا تو باقاعدہ طور پر یہ ذمہ داری آپنے اپنے ذمہ لے لی اور آخر دم تک اس عظیم خدمت کو انجام دیتے رہے۔    آپ کا خطبہ قومی و ملی حالات اور وعظ ونصیحت پر مشتمل ہوتا تھا آپ کے خطبوں کی گونج آج بھی مبارکپور کی فضاؤں میں محسوس کیجاتی ہے۔

   اسی دوران شیعہ جامع مسجد مبارکپور کے انتظام اور تولیت کی ذمہ داری جو گزشتہ ادوار میں بھی اس خوانوادہ کے علماء سے متعلق تھی آپ کے ذمہ آگئ جسے آپنے آخر دم تک بحسن وخوبی انجام دیا اور اب یہ ذمہ داری آپ کے فرزند اکبر حجۃ الاسلام والمسلمین الحاج مولانا فیروز عباس صاحب قبلہ حفظہ اللہ کے ہاتھ میں ہے۔

شیعہ جامع مسجد مبارکپور

شیعہ جامع مسجد مبارکپور کی  خوبصورت اور پر شکوہ عمارت آپ کی اور آپ کے بعد آپ کے فرزند حجۃ الاسلام والمسلمین عالیجناب الحاج مولانا فیروز عباس صاحب قبلہ اور حجۃ الاسلام والمسلمین الحاج مولانا عرفان عباس صاحب سلمہ کی سعی بلیغ اور مومنین مبارکپور کے وسیع مالی تعاون کا نتیجہ ہے۔

 

مدرسہ باب العلم مبارکپور میں دوبارہ خدمات

جب آپ مستقل طور سے وطن میں رہکر امام جمعہ وجماعت کے فرائض انجام دینے لگے تو اسی دوران مدرسہ باب العلم مبارکپور کی انتظامیہ کمیٹی کی طرف سے مدرسہ میں تعلیم کے لئے سلسلہ جنبانی شروع ہوئ مگر آپنے ہر بار انکار کردیا پھر ایک بار جب اصرار بڑھا تو  استخارہ پر بنا رکھی گئ  استخارہ بہتر آیا مگر صرف تعلیم کے لئے چنانچہ آپ نے ٤ اکتوبر ١٩٧٧ء سے مدرسہ باب العلم مبارکپور میں بحیثیت گسٹ لکچرر کام کرنا شروع کیا، اسوقت عم محترم عالیجناب الحاج مولانا حکیم سلمان احمد صاحب قبلہ اعلی اللہ مقامہ مدرس اعلیٰ تھے، غالباً عم محترم  کے استعفے کے بعد ١٩٧٩ء میں پھر سے دوبارہ مدرس اعلیٰ (پرنسپل) کا عہدہ سنبھالا۔

٣/٢/ اپریل ١٩٨٠ء جب مدرسہ باب العلم مبارکپور کا پچاس سالہ جشن زریں منایا گیا اسوقت بھی مدرس اعلیٰ (پرنسپل) کی ذمہ داری آپ ہی کے کاندھے پر تھی اور جشن زریں کی جو استقبالیہ کمیٹی بنائی گئی تھی آپ اس استقبالیہ کمیٹی کے سکریٹری تھے، یہ پہلا موقع تھا جب اتنی بڑی تعداد میں ملک اور بیرون ملک دنیا بھر سے علماء ، مبارکپور کی سرزمین پر تشریف لائے، جشن زریں کے بعد آپنے کچھ ناگوار حالات کی بنیاد پر استعفیٰ دیدیا۔

 

تصنیف و تالیف و تراجم

١٩٨٠ء سے ١٩٨٧ء کے درمیان آپ کتابوں کی تصنیف و تالیف و ترجمے میں مشغول ہوگئے

آپ جہاں ایک قابل قدر مصنف تھے وہیں ایران کے کئ شہرہ آفاق اور جید علماء کی تصانیف کے مترجم بھی تھے۔

آپ کی ترجمہ شدہ کتابوں میں "معاد" شہید دستغیب علیہ الرحمہ اور وصیت نامہ مولاۓ کائنات حضرت علی علیہ السّلام بنام حضرت امام حسن علیہ السّلام بڑی  مشہور ہیں۔

اگرچہ آپ نے بڑی ہی گوشہ نشینی کی زندگی گذاری اور اتنی عظیم شخصیت ہونے کے باجود زندگی بھر کھپڑیل کے ایک معمولی اور خستہ مکان میں رہے اور کبھی اپنی شہرت کے طالب نہیں رہے پھر بھی آپ کی علمی صلاحیتوں کا شہرہ نہ صرف ہندستان بلکہ بیرون ممالک تک پہونچ گیا چنانچہ جنوری ١٩٨٦ء میں جمہوریۂ اسلامی ایران کی خصوصی دعوت پر آل ورڈ کانفرنس اندیشۂ اسلامی میں شرکت کے لئے ایران تشریف لےگۓ اور سازمان تبلیغات اسلامی تہران کی فرمائیش پر "رھبریت در حکومت اسلامی ورابطہ آنان با قوای سہگانہ" کے عنوان سے ایک کتاب فارسی میں تحریر فرمائی جو فارسی ہی میں سازمان تبلیغات سے طبع ھوکر ہزاروں کی تعداد میں کانفرنس میں تقسیم کی گئی۔

اسی سال آپ حج بیت اللہ و دیگر عتبات عالیات کی زیارت سے بھی مشرف ہوئے۔

آپنے چہاردہ معصومین علیہم السلام میں سے ١٣ معصومین علیہم السلام کے مزارات کی زیارت کا شرف حاصل کیا۔

آپ شاعری کا بھی ذوق رکھتے تھے چنانچہ آپنے معصومین علیہم السلام کی شان میں کئ قصیدے لکھے اور اپنی والدۂ ماجدہ مرحومہ اور اپنے عم محترم مرحوم کی وفات پر فارسی میں نظم بھی تحریر فرمائیی۔

آپ کی عربی میں بھی کئ تحریریں موجود ہیں اس سے پتا چلتا ہے کہ آپ اردو زبان کے ساتھ ہی عربی و فارسی زبانوں پر بھی مکمل عبور رکھتے تھے بلکہ آقائے السید محمد الموسوی حفظہ اللہ سے جب بھی گفتگو فرماتے عربی میں فرماتے اور جب انقلاب اسلامی کے زمانے میں آقائے رفسنجانی طاب ثراہ پہلی بار لکھنؤ تشریف لاۓ اور جامعہ سلطانیہ سلطان المدارس میں ایک جلسہ رکھا گیا اور اسمیں علامہ علی ارشاد النجفی اعلی اللہ مقامہ نے فارسی میں جو تقریر کی برجستہ آقائے رفسنجانی طاب ثراہ نے فرمایا:

" شیخ ارشاد کا ارشاد بہت مفید ہے"

آپ کی تدریس کا معیار بہت بلند تھا جسنے بھی آپ سے پڑھا وہ آپ کی اعلیٰ علمی استعداد و قابلیت اور تدریس کے دلنشین اسلوب کا قائل ہوگیا۔ آپ جب بھی ممبئی تشریف لیجاتے جامعۂ امیرالمومنین ع نجفی ہاؤس کے پرانے بزرگ طلبہ مغل مسجد ممبئی کے پارک میں بیٹھ کر آپ سے کسب فیض کرتے۔

 آج بھی چاہے آپ کے شاگرد ہوں یا غیر شاگرد سب آپ کی قابلیت کی داد دیتے ہیں۔ آپ کے ہزاروں شاگرد اس وقت دنیا بھر کے مختلف مقامات پر تدریس و تبلیغ دین میں مصروف ہیں۔

 

غریبوں،ضرورتمندوں کی امداد

آپ نے ممبئی میں آیۃ اللہ العظمیٰ آقائے السید ابوالقاسم الخوئ طاب ثراہ کے وکیل مطلق حجۃ الاسلام والمسلمین الحاج آقائے السید محمد الموسوی حفظہ اللہ کے خصوصی نمائندے کی حیثیت سے مبارکپور اور اطراف مبارکپور میں لا تعداد غریبوں، مسکینوں، محتاجوں اور ضرورتمندوں کی امداد فرمائی۔

آپ آقائے السید محمد الموسوی حفظہ اللہ کے خاص دوستوں میں تھے آپ کو مسافری کے دوران نجفی ہاؤس کے بیت الصلوٰۃ میں قیام کرنے کی خصوصی اجازت حاصل تھی۔

یہی وجہ تھی کہ آپ کے چہلم کے موقع پر آقائے السید محمد الموسوی حفظہ اللہ خصوصی طور پر مبارکپور تشریف لائے اور آپ کی مجلسِ چہلم کو خطاب فرمایا۔

آپ غیر معمولی صلاحیتوں کے  مالک تھے مگر لوگوں نے آپ کو پہچانا نہیں

"قدر گوھر شاہ داند یا بداند جوھری"

 

آپ کا تبلیغی جہاد

میں نے اپنے بچپن میں دیکھا کہ جب بھی مبارکپور کے اطراف مثلاً خطیب پور، پتار وغیرہ میں  آپ کا مجلس پڑھنے کا وعدہ ہوتا تھا تو مجھ سے کہتے کہ فلاں صاحب کے یہاں سے سائیکل لیکر شیعہ عیدگاہ کے سامنے مین روڈ پر میرا انتظار کرو چنانچہ میں سائیکل لیکر وہاں کھڑا ہوجاتا تھا، آپ آتے اور اپنے چوڑے پاجامہ کو نیچے سے لپیٹکر اسٹیل کی چوڑی لگادیتے تاکہ پائنچا سائیکل کے چین میں نہ پھنس جاۓ پھر اتنی عظیم شخصیت ہونے کے باجود سائیکل پر سوار ہوکر مجلس کیلئے نکل پڑتے۔ جبکہ آج چھوٹے چھوٹے ذاکر اے سی اور جہاز کے ٹکٹ کا تقاضا کرتے ہیں۔

املو جو مبارکپور سے تقریباًً دو کیلو میٹر دور ہے وہاں نکاح یا نمازِ جنازہ پڑھانا ہوتا تو روز و شب کے فرق کے بغیر مجھے لیکر نکل پڑتے۔

 

سید الشہداء علیہ السّلام سے آپ کا ربط

آپ، سید الشہداء حضرت امام حسین علیہ السّلام سے اک خاص لگاؤ رکھتے تھے اس لیۓ یہ سوچے بغیر کہ  میں اک بہت بڑا عالم ہوں عشرۂ محرم کی ہر مجلس میں شرکت فرماتے تھے جب کہ صاحب منبر کتاب سے مجلس پڑھ رہا ہوتا تھا پھر بھی آپ غور سے اسکی مجلس سنتے تھے اور مصائب میں کھل کر گریہ فرماتے تھے۔

محرم کی ٩ تاریخ کو شب عاشور اور روز عاشور کے احترام میں اپنی چارپائی پلٹ دیتے تھے اور عاشور کے دن ننگے سر اور ننگے پیر رہتے تھے۔

 

تقویٰ و پرہیزگاری

تقویٰ و پرہیزگاری میں آپ کمال رکھتے تھے حساب کتاب میں ایک پیسہ کم اور ایک پیسہ زیادہ کیوں ہے اسپہ کڑی نگاہ رکھتے تھے، خطبۂ جمعہ میں جب بھی آخرت کا ذکر آتا گریہ فرماتے اور روزانہ بلا ناغہ مسجد سے نماز مغربین کے بعد گھر تشریف لاتے اور جانماز پچھاکر دیر تک تعقیبات و دعا میں مشغول رہتے۔

بیماری کے طویل ترین ایام میں فرماتے " خدایا! یا تو مجھے محمد وآل محمد علیھم السّلام کے صدقے میں شفاء دے یا پھر مجھے دنیا سے اٹھالے، مجھے خوف ہے کہیں یہ زبان شکوہ سے آشنا نہ ہوجائے۔

آپ حق گوئی میں کمال رکھتے تھے اور حق بولنے میں  کسی کا خیال نہیں رکھتے تھے اسی لیے بعض لوگ آپ کی حق گوئی کی بنا پر آپ سے ناراض رہتے تھے مگر آپ نے لوگوں کی رضا کے لیے خدا کی ناراضگی مول نہیں لی۔

اس کے باوجود آپ صرف بزرگوں ہی سے نہیں بلکہ بچوں کے ساتھ بھی نہایت اخلاق سے پیش آتے تھے اور چھوٹوں کو ہمیشہ آپ کہکر مخاطب ہوتے تھے۔

بعد نمازِ صبح مسجد سے گھر آتے ہی سبھی بیٹوں، بیٹیوں کو نمازِ صبح کے لئے بیدار کرتے اور تلاوتِ قرآن کی تلقین فرماتے۔

آپ کی زندگی میں دنیاوی سکون میسر نہ تھا مگر کبھی کسی سے تقدیر کا شکوہ نہیں کیا

صبرو شکر کی کٹھن منزلوں کو طے کرتے ہوئے آپنے ۱۳محرم ۱۴۰۸ھ مطابق ۸ ستمبر ۱۹۸۷ء سہ پہر ۲ بجے داعی اجل کو لبیک کہا اور ہمیں ہمیشہ کے لیے اپنے عظیم سایہ سے محروم کر دیا

انا للہ و انا الیہ راجعون

ھزاروں سال نرگس اپنی بے نوری پہ روتی ہے

بڑی مشکل سے ھو تا ہے چمن میں دیدہ ور پیدا

آپ کو ہزاروں سوگواروں کے درمیان شیعہ عیدگاہ قبرستان مبارکپور میں دفن کیاگیا۔

 

اولاد

آ پ نے چار فرزند چھوڑ ے ، جنمیں

مولانا فيروز عباس صاحب قبله

مولانا احسان عباس قمی صاحب قمی

مولانا عرفان عباس صاحب

مولانا محمد عباس صاحب

اور چاروں اسوقت خدمت دین میں مصروف ہیں

اللہ خدمات کو قبول کرے اور توفیقات میں اضافہ فرمائیے

 

شاگردان

اور آپ کے شاگردوں کی اک طویل فہرست ہے جنمیں مشہور زمانہ شخصیتیں یہ ہیں:

حجۃ الاسلام والمسلمین عالیجناب الحاج مولانا محمود الحسن خانصاحب قبلہ اعلی اللہ مقامہ (سابق پرنسپل جامعۂ ناصریہ جونپور)

حجۃ الاسلام والمسلمین عالیجناب الحاج مولانا سید عابد حسین صاحب قبلہ کراروی اعلی اللہ مقامہ(بانئ حوزہ علمیہ امام خمینی رہ وٹوا احمدآباد گجرات)

حجۃ الاسلام والمسلمین عالیجناب مولانا تقی الحیدری صاحب قبلہ اعلی اللہ مقامہ(سابق پرنسپل جامعۂ وثیقہ عربی کالج فیض آباد)

حجۃ الاسلام والمسلمین عالیجناب الحاج مولانا مسرور حسن صاحب قبلہ مجیدی اعلی اللہ مقامہ ( صدرالعلماء مبارکپوری)

حجۃ الاسلام والمسلمین عالیجناب مولانا شمیم عالم صاحب قبلہ اعلی اللہ مقامہ(سابق امام جماعت امامیہ مسجد ممبئی)

وغیرھم

 

شجرۂ مبارکہ علماء خانوادۂ واحدی

مولانا فیروز عباس،احسان عباس, مولانا عرفان عباس, مولانا محمد عباس

ابناء الحاج مولانا علی ارشاد النجفی اعلی اللہ مقامہ

ابن حکیم مولانا علی حماد صاحب اعلی اللہ مقامہ

حکیم الحاج مولانا سلمان احمد صاحب اعلی اللہ مقامہ

ابن حکیم مولانا علی حماد صاحب اعلی اللہ مقامہ

ابن الحاج حکیم مولانا علی سجاد صاحب اعلی اللہ مقامہ

ابن حکیم مولانا میانصاحب یار علی اعلی اللہ مقامہ

ابن حکیم مولانا میانصاحب عبد الواحد اعلی اللہ مقامہ

مولانا محمد ابراہیم صاحب اعلی اللہ مقامہ

ابن حکیم مولانا میانصاحب عبدالواحد اعلی اللہ مقامہ

ابن مولانا میانصاحب جان محمد (بڑے میانصاحب) اعلی اللہ مقامہ

ابن شیخ خوانوادہ و رئیس قوم میانصاحب دوست محمد اعلی اللہ مقامہ

 

(راقم الحروف: احسان عباس قمی مبارکپوری)

مزید دیکھیں
تصاویر
مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ
۔
مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ
مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ
۔
3ڈاؤن لوڈز
زوم
ڈاؤن لوڈ
شیئر کریں
مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ
قبر مطهر
مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ
تقریر
مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ
علماء کے ہمراہ
مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ مولانا علی ارشاد مبارکپوری رہ
متعلقہ لنکس
دیگر علما
کامنٹ
اپنا کامنٹ نیچے باکس میں لکھیں
بھیجیں
نئے اخبار سے جلد مطلع ہونے کے لئے یہاں ممبر بنیں
سینڈ
براہ کرم پہلے اپنا ای میل درج کریں
ایک درست ای میل درج کریں
ای میل رجسٹر کرنے میں خرابی!
آپ کا ای میل پہلے ہی رجسٹر ہو چکا ہے!
آپ کا ای میل کامیابی کے ساتھ محفوظ ہو گیا ہے
ulamaehin.in website logo
ULAMAEHIND
علماۓ ہند ویب سائٹ، جو ادارہ مہدی مشن (MAHDI MISSION) کی فعالیتوں میں سے ایک ہے، علماۓ کرام کی تصاویر اور ویڈیوز کو پیش کرتے ہوۓ، ان حضرات کی خدمات کو متعارف کرواتی ہے۔ نیز، اس سائٹ کا ایک حصہ ہندوستانی مدارس اور کتب خانوں، علماء کی قبور کو متعارف کروانے سے مخصوص ہے۔
Copy Rights 2024